10 am - 07 pm

Monday - Saturday

MB-46 DHA Phase 6,

Lahore, Pakistan

+92-42-111-111-040

LahoreRealEstate@Gmail.Com

Compare Listings

Pakistan Real Estate Tax 2024-25: Will Prices Rise or Fall? Expert Insights

Pakistan Real Estate Tax 2024-25: Will Prices Rise or Fall? Expert Insights

CMY of LRE: Accurate Predictions on Property Taxes | Understanding Real Estate Tax Changes in Pakistan Budget 2024-25

Assalamu Alaikum, dear friends. This is Chaudhry Mujahid Yaseen from Lahore Real Estate. Today, I’ll explain the latest real estate tax changes that came into effect before the budget. I shared a video three months ago predicting these changes, and now they are official. Here’s a detailed breakdown of the new tax regulations affecting property buyers and sellers, specifically for non-filers and filers.

Sale of Property:

  • Filers:
    • 5 Crore or below: 3% tax remains
    • 5-10 Crore: 3.5% tax increase
    • 10 Crore and above: 4% tax increase
  • Late Filers:
    • 5 Crore or below: 6% tax
    • 5-10 Crore: 7% tax
    • 10 Crore and above: 8% tax
  • Non-Filers: 10% tax

Purchase of Property:

  • Filers:
    • 5 Crore or below: 3% tax remains
    • 5-10 Crore: 3.5% tax increase
    • 10 Crore and above: 4% tax increase
  • Late Filers:
    • 5 Crore or below: 6% tax
    • 5-10 Crore: 7% tax
    • 10 Crore and above: 8% tax
  • Non-Filers: 12% tax for properties below 5 Crore; 16% tax for properties between 5-10 Crore; 20% tax for properties above 10 Crore

Pakistan Real Estate Tax 2024-25 (1)

Impact on Market Transactions

In the past two years, 90-95% of property transactions involved filers, whether local or overseas Pakistanis. This trend continues as non-filers face higher taxes. Filers benefit from relatively stable tax rates, encouraging continued market activity.

Practical Experience and Market Insights

Imran Khan’s government introduced an amnesty scheme, significantly impacting market transactions. Even with higher taxes for non-filers, most transactions are conducted by filers.

Challenges and Court Decisions

The new regulations also impact developers. A significant change is the taxation on their revenue, where the government assumes a certain percentage of profit on property sales and taxes it accordingly. This regulation is being challenged in court as unconstitutional, similar to how it has been challenged in KPK and Balochistan.

Practical Experience and Market Insights

Despite the higher taxes for non-filers, most property transactions are expected to continue being conducted by filers. This shift towards filers is seen as beneficial for the market, ensuring compliance and stability.

Minor Impact on Construction Costs

While the budget has increased taxes on some building materials like cement, there have been no major tax hikes on other building materials. This should keep construction costs relatively stable.

Conclusion

The new tax regulations for 2024 have brought minor changes for filers, promoting a stable real estate market in Lahore, especially in DHA Phase 9. Non-filers face higher taxes, encouraging them to comply and file taxes. This detailed guide aims to help property buyers and sellers understand these changes and make informed decisions.

Thank you for reading. For more insights and updates, stay connected with Lahore Real Estate.

Discover the latest changes to Pakistan’s real estate taxes and their impact on property prices. Learn about CGT, FED, and advance income tax implications for buyers and sellers.

Pakistan Real Estate Tax 2024-25: Will Prices Rise or Fall? Expert Insights

The Pakistani real estate market is undergoing significant changes with the introduction of new tax policies for the fiscal year 2024-25. These changes, particularly impacting capital gains tax (CGT), federal excise duty (FED), and advance income tax, are expected to have a ripple effect on property prices and investment behavior.

Capital Gains Tax (CGT):

Previously, CGT for properties sold within 6 years of purchase was subject to a sliding scale ranging from 15% to 2.5%. However, the government has implemented a flat rate of 15% for both filers and non-filers, regardless of the holding period. This change will particularly affect individuals holding properties for more than 6 years, as they will now pay 15% tax regardless of the profit.

The latest budget proposals for the year 2024-2025 have introduced significant changes in the taxation of real estate and property. These changes aim to streamline the tax regime and encourage compliance among taxpayers. Here’s a detailed look at the proposed changes to help you understand how they might impact your real estate transactions.

1. Capital Gain Tax on Real Estate

Currently, capital gain tax on immovable property applies to both filers and non-filers based on a holding period (1 to 6 years) for plots, flats, and constructed property. After 6 years of holding, there was no tax.

New Proposal

  • Uniform Application of Tax: Regardless of the holding period, capital gain tax will now be applicable at 15% for filers and up to 45% for non-filers.
  • Effective Date: This rate will apply to properties acquired on or after July 1, 2024.
  • Previous Acquisitions: Properties acquired on or before June 30, 2024, will follow the previous tax structure based on the holding period.

2. Progressive Withholding Tax on Transfer of Immovable Property

Currently, the purchase of immovable property is taxed at 3% for filers and 6% for non-filers.

New Proposal

To address the issue of delayed tax returns, new progressive withholding tax rates are proposed:

  • Filers:
    • Property value up to Rs 50 million: 3%
    • Property value from Rs 50 million to Rs 100 million: 3.5%
    • Property value above Rs 100 million: 4%
  • Late/Delayed Filers:
    • Property value up to Rs 50 million: 6%
    • Property value from Rs 50 million to Rs 100 million: 7%
    • Property value above Rs 100 million: 8%
  • Non-Filers:
    • Property value up to Rs 50 million: 12%
    • Property value from Rs 50 million to Rs 100 million: 16%
    • Property value above Rs 100 million: 20%

Sale of Immovable Property

  • Filers:
    • Property value up to Rs 50 million: 3%
    • Property value from Rs 50 million to Rs 100 million: 4%
    • Property value above Rs 100 million: 5%
  • Late/Delayed Filers:
    • Property value up to Rs 50 million: 6%
    • Property value from Rs 50 million to Rs 100 million: 7%
    • Property value above Rs 100 million: 8%
  • Non-Filers:
    • Uniform rate of 10% irrespective of property value

3. FED on Immovable Property

New Proposal

To stabilize the real estate sector and curb speculation, a Federal Excise Duty (FED) of 5% is proposed on new plots, residential, and commercial property.

  • Commercial Properties and First Sale of Residential Properties: A 5% FED will be applied.

Pakistan Real Estate Tax 2024-25: How Does it Impact On Property Market?

The proposed changes in real estate taxation for 2024-2025 are aimed at creating a more structured and compliant tax environment. These changes include significant adjustments to capital gain tax, progressive withholding tax, and the introduction of FED on immovable property. Property buyers, sellers, and investors must stay informed about these updates to make well-informed decisions.

Impact on the Real Estate Market:

The changes in tax policies are expected to have a mixed impact on the real estate market. While the flat CGT rate and increased advance income tax for non-filers may initially dampen market activity, the government’s intention to encourage filer compliance and reduce tax evasion could lead to increased transparency and long-term stability.

Key Takeaways:

  • The new tax policies are aimed at increasing revenue and encouraging tax compliance.
  • The impact on property prices will depend on the market’s response to the changes.
  • Non-filers will face a significant financial burden due to the higher CGT and advance income tax rates.
  • The government’s efforts to streamline the real estate sector could lead to increased investment and market growth in the long term.
Pakistan Real Estate Tax 2024-25
Pakistan Real Estate Tax 2024-25
Pakistan Real Estate Tax 2024-25 (3)
Pakistan Real Estate Tax 2024-25 (3)
Pakistan Real Estate Tax 2024-25 (2)

Non-Filer Impact:

Non-filers will face significant tax implications, as they will be taxed according to their income tax brackets. Their CGT can range from 15% to 35%, depending on their tax bracket. This could deter non-filers from engaging in property transactions, potentially impacting market activity.

Advance Income Tax:

Changes to advance income tax vary depending on the filer status and the value of the property. For properties below Rs. 5 crores, filers continue to pay 3% advance tax, while non-filers now pay 12% (up from 11%). For properties above Rs. 10 crores, filers see a reduction to 4% (from 35%), while non-filers face an increase to 20% (from 16%).

Conclusion:

The changes in Pakistan’s real estate tax policies are significant and will likely impact the market in both the short and long term. While some initial uncertainty and adjustments are expected, the government’s aim to create a more transparent and regulated market could ultimately benefit the real estate sector and the Pakistani economy.

READ MORE: https://lahorerealestate.com/?s=tax


LRE of CMY: پراپرٹی ٹیکس کے بارے میں درست پیشین گوئیاں | پاکستان کے بجٹ 2024-25 میں رئیل اسٹیٹ ٹیکس کی تبدیلیوں کو سمجھنا
السلام علیکم پیارے دوستو۔ یہ لاہور رئیل اسٹیٹ سے تعلق رکھنے والے چوہدری مجاہد یٰسین ہیں۔ آج، میں ریئل اسٹیٹ ٹیکس کی تازہ ترین تبدیلیوں کی وضاحت کروں گا جو بجٹ سے پہلے لاگو ہوئیں۔ میں نے تین مہینے پہلے ایک ویڈیو شیئر کی تھی جس میں ان تبدیلیوں کی پیشین گوئی کی گئی تھی، اور اب وہ سرکاری ہیں۔ یہاں جائیداد کے خریداروں اور بیچنے والوں کو متاثر کرنے والے نئے ٹیکس ضوابط کی تفصیلی بریک ڈاؤن ہے، خاص طور پر نان فائلرز اور فائلرز کے لیے۔

جائیداد کی فروخت:

فائلرز:
5 کروڑ یا اس سے کم: 3% ٹیکس باقی ہے۔
5-10 کروڑ: 3.5% ٹیکس اضافہ
10 کروڑ اور اس سے اوپر: ٹیکس میں 4 فیصد اضافہ
دیر سے فائلرز:
5 کروڑ یا اس سے کم: 6% ٹیکس
5-10 کروڑ: 7% ٹیکس
10 کروڑ اور اس سے اوپر: 8% ٹیکس
نان فائلرز: 10% ٹیکس
جائیداد کی خریداری:

فائلرز:
5 کروڑ یا اس سے کم: 3% ٹیکس باقی ہے۔
5-10 کروڑ: 3.5% ٹیکس اضافہ

10 کروڑ اور اس سے اوپر: ٹیکس میں 4 فیصد اضافہ
دیر سے فائلرز:
5 کروڑ یا اس سے کم: 6% ٹیکس
5-10 کروڑ: 7% ٹیکس
10 کروڑ اور اس سے اوپر: 8% ٹیکس
نان فائلرز: 5 کروڑ سے کم جائیداد پر 12 فیصد ٹیکس۔ 5-10 کروڑ کے درمیان جائیدادوں پر 16% ٹیکس؛ 10 کروڑ سے زائد جائیدادوں پر 20 فیصد ٹیکس
پاکستان ریئل اسٹیٹ ٹیکس 2024-25 (1)

مارکیٹ کے لین دین پر اثر
پچھلے دو سالوں میں، جائیداد کے لین دین میں 90-95% فائلرز، چاہے مقامی ہوں یا بیرون ملک مقیم پاکستانی۔ یہ رجحان جاری ہے کیونکہ نان فائلرز کو زیادہ ٹیکسوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ فائلرز نسبتاً مستحکم ٹیکس کی شرحوں سے فائدہ اٹھاتے ہیں، مارکیٹ کی مسلسل سرگرمی کی حوصلہ افزائی کرتے ہیں۔

عملی تجربہ اور مارکیٹ کی بصیرت
عمران خان کی حکومت نے ایمنسٹی اسکیم متعارف کرائی جس سے مارکیٹ کے لین دین پر نمایاں اثر پڑا۔ نان فائلرز کے لیے زیادہ ٹیکس کے باوجود، زیادہ تر لین دین فائلرز ہی کرتے ہیں۔

چیلنجز اور عدالتی فیصلے
نئے ضوابط ڈویلپرز کو بھی متاثر کرتے ہیں۔ ایک اہم تبدیلی ان کی آمدنی پر ٹیکس لگانا ہے، جہاں حکومت جائیداد کی فروخت پر منافع کا ایک خاص فیصد فرض کرتی ہے اور اس کے مطابق ٹیکس لگاتی ہے۔ اس ضابطے کو غیر آئینی قرار دے کر عدالت میں چیلنج کیا جا رہا ہے، جیسا کہ کے پی کے اور بلوچستان میں چیلنج کیا گیا ہے۔

عملی تجربہ اور مارکیٹ کی بصیرت
نان فائلرز کے لیے زیادہ ٹیکس کے باوجود، زیادہ تر جائیداد کے لین دین فائلرز کے ذریعے کیے جانے کی توقع ہے۔ فائلرز کی طرف اس تبدیلی کو مارکیٹ کے لیے فائدہ مند سمجھا جاتا ہے، جو تعمیل اور استحکام کو یقینی بناتا ہے۔

تعمیراتی اخراجات پر معمولی اثر
جب کہ بجٹ میں سیمنٹ جیسے کچھ تعمیراتی سامان پر ٹیکس میں اضافہ کیا گیا ہے، وہیں دیگر تعمیراتی سامان پر کوئی بڑا ٹیکس نہیں بڑھایا گیا ہے۔ اس سے تعمیراتی اخراجات نسبتاً مستحکم رہیں۔

نتیجہ
2024 کے نئے ٹیکس ریگولیشنز فائلرز کے لیے معمولی تبدیلیاں لائے ہیں، جس سے لاہور میں ایک مستحکم رئیل اسٹیٹ مارکیٹ کو فروغ دیا گیا ہے، خاص طور پر ڈی ایچ اے فیز 9 میں۔ نان فائلرز کو زیادہ ٹیکسوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے، جس سے ان کی تعمیل کرنے اور ٹیکس جمع کرنے کی حوصلہ افزائی ہوتی ہے۔ اس تفصیلی گائیڈ کا مقصد جائیداد کے خریداروں اور فروخت کنندگان کو ان تبدیلیوں کو سمجھنے اور باخبر فیصلے کرنے میں مدد کرنا ہے۔

پڑھنے کے لیے آپ کا شکریہ۔ مزید بصیرت اور اپ ڈیٹس کے لیے لاہور ریئل اسٹیٹ سے جڑے رہیں۔

پاکستان کے رئیل اسٹیٹ ٹیکس میں تازہ ترین تبدیلیوں اور جائیداد کی قیمتوں پر ان کے اثرات دریافت کریں۔ خریداروں اور بیچنے والوں کے لیے CGT، FED، اور ایڈوانس انکم ٹیکس کے مضمرات کے بارے میں جانیں۔

پاکستان رئیل اسٹیٹ ٹیکس 2024-25: قیمتیں بڑھیں گی یا گریں گی؟ ماہر بصیرت
پاکستانی رئیل اسٹیٹ مارکیٹ مالی سال 2024-25 کے لیے نئی ٹیکس پالیسیوں کے متعارف ہونے سے اہم تبدیلیوں سے گزر رہی ہے۔ یہ تبدیلیاں، خاص طور پر کیپیٹل گین ٹیکس (CGT)، فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی (FED)، اور ایڈوانس انکم ٹیکس پر اثر انداز ہونے سے، جائیداد کی قیمتوں اور سرمایہ کاری کے رویے پر اثر انداز ہونے کی توقع ہے۔

کیپٹل گینز ٹیکس (CGT):

اس سے پہلے، خریداری کے 6 سال کے اندر فروخت ہونے والی جائیدادوں کے لیے CGT 15% سے 2.5% تک سلائیڈنگ اسکیل کے تابع تھا۔ تاہم، حکومت نے انعقاد کی مدت سے قطع نظر، فائلرز اور نان فائلرز دونوں کے لیے 15% کی فلیٹ ریٹ نافذ کی ہے۔ یہ تبدیلی خاص طور پر 6 سال سے زیادہ جائیداد رکھنے والے افراد کو متاثر کرے گی، کیونکہ اب وہ منافع سے قطع نظر 15% ٹیکس ادا کریں گے۔

سال 2024-2025 کے لیے تازہ ترین بجٹ تجاویز میں رئیل اسٹیٹ اور پراپرٹی پر ٹیکس لگانے میں اہم تبدیلیاں کی گئی ہیں۔ ان تبدیلیوں کا مقصد ٹیکس کے نظام کو ہموار کرنا اور ٹیکس دہندگان کے درمیان تعمیل کی حوصلہ افزائی کرنا ہے۔ یہاں مجوزہ تبدیلیوں پر ایک تفصیلی نظر ہے تاکہ آپ کو یہ سمجھنے میں مدد ملے کہ ان کا آپ کے رئیل اسٹیٹ کے لین دین پر کیا اثر پڑ سکتا ہے۔

1. رئیل اسٹیٹ پر کیپٹل گین ٹیکس
فی الحال، غیر منقولہ جائیداد پر کیپیٹل گین ٹیکس فائلرز اور نان فائلرز دونوں پر لاگو ہوتا ہے جو پلاٹوں، ​​فلیٹوں اور تعمیر شدہ جائیداد کے لیے ہولڈنگ کی مدت (1 سے 6 سال) کی بنیاد پر ہوتا ہے۔ 6 سال ہولڈنگ کے بعد کوئی ٹیکس نہیں تھا۔

نئی تجویز
ٹیکس کا یکساں اطلاق: ہولڈنگ کی مدت سے قطع نظر، کیپٹل گین ٹیکس اب فائلرز کے لیے 15% اور نان فائلرز کے لیے 45% تک لاگو ہوگا۔
مؤثر تاریخ: یہ شرح 1 جولائی 2024 کو یا اس کے بعد حاصل کی گئی جائیدادوں پر لاگو ہوگی۔
سابقہ ​​حصول: 30 جون 2024 کو یا اس سے پہلے حاصل کی گئی پراپرٹیز ہولڈنگ کی مدت کی بنیاد پر پچھلے ٹیکس ڈھانچے کی پیروی کریں گی۔
2. غیر منقولہ جائیداد کی منتقلی پر پروگریسو ودہولڈنگ ٹیکس
فی الحال، غیر منقولہ جائیداد کی خریداری پر فائلرز کے لیے 3% اور نان فائلرز کے لیے 6% ٹیکس ہے۔

نئی تجویز
تاخیر سے ٹیکس گوشواروں کے مسئلے سے نمٹنے کے لیے، نئی ترقی پسند ودہولڈنگ ٹیکس کی شرحیں تجویز کی گئی ہیں:

فائلرز:
جائیداد کی قیمت 50 ملین روپے تک: 3%
جائیداد کی قیمت 50 ملین روپے سے 100 ملین روپے تک: 3.5%
100 ملین روپے سے زیادہ جائیداد کی قیمت: 4%
لیٹ/تاخیر فائلرز:
جائیداد کی قیمت 50 ملین روپے تک: 6%
جائیداد کی قیمت 50 ملین روپے سے 100 ملین روپے تک: 7%
100 ملین روپے سے زیادہ جائیداد کی قیمت: 8%
نان فائلرز:
جائیداد کی قیمت 50 ملین روپے تک: 12%
جائیداد کی قیمت 50 ملین روپے سے 100 ملین روپے تک: 16%
100 ملین روپے سے زیادہ جائیداد کی قیمت: 20%
غیر منقولہ جائیداد کی فروخت
فائلرز:
جائیداد کی قیمت 50 ملین روپے تک: 3%
جائیداد کی قیمت 50 ملین روپے سے 100 ملین روپے تک: 4%
100 ملین روپے سے زیادہ جائیداد کی قیمت: 5%
لیٹ/تاخیر فائلرز:
جائیداد کی قیمت 50 ملین روپے تک: 6%
جائیداد کی قیمت 50 ملین روپے سے 100 ملین روپے تک: 7%
100 ملین روپے سے زیادہ جائیداد کی قیمت: 8%
نان فائلرز:
جائیداد کی قیمت سے قطع نظر 10% کی یکساں شرح
3. غیر منقولہ جائیداد پر FED
نئی تجویز
رئیل اسٹیٹ سیکٹر کو مستحکم کرنے اور قیاس آرائیوں کو روکنے کے لیے، نئے پلاٹوں، ​​رہائشی اور کمرشل پراپرٹی پر فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی (FED) 5% کی تجویز ہے۔

کمرشل پراپرٹیز اور رہائشی املاک کی پہلی فروخت: 5% FED لاگو کیا جائے گا۔
پاکستان ریئل اسٹیٹ ٹیکس 2024-25: اس کا پراپرٹی مارکیٹ پر کیا اثر پڑتا ہے؟
2024-2025 کے لیے رئیل اسٹیٹ ٹیکسیشن میں مجوزہ تبدیلیوں کا مقصد ٹیکس کے لیے مزید منظم اور موافق ماحول پیدا کرنا ہے۔ ان تبدیلیوں میں کیپٹل گین ٹیکس میں اہم ایڈجسٹمنٹ، ترقی پسند ودہولڈنگ ٹیکس، اور غیر منقولہ جائیداد پر FED کا تعارف شامل ہے۔ جائیداد کے خریداروں، فروخت کنندگان، اور سرمایہ کاروں کو اچھی طرح سے باخبر فیصلے کرنے کے لیے ان اپ ڈیٹس کے بارے میں باخبر رہنا چاہیے۔

رئیل اسٹیٹ مارکیٹ پر اثر:

ٹیکس پالیسیوں میں تبدیلیوں کا رئیل اسٹیٹ مارکیٹ پر ملے جلے اثرات کی توقع ہے۔ اگرچہ فلیٹ CGT کی شرح اور نان فائلرز کے لیے ایڈوانس انکم ٹیکس میں اضافہ ابتدائی طور پر مارکیٹ کی سرگرمیوں کو کم کر سکتا ہے، حکومت کا فائلرز کی تعمیل کی حوصلہ افزائی اور ٹیکس چوری کو کم کرنے کا ارادہ شفافیت اور طویل مدتی استحکام کا باعث بن سکتا ہے۔

اہم نکات:

نئی ٹیکس پالیسیوں کا مقصد ریونیو میں اضافہ اور ٹیکس کی تعمیل کی حوصلہ افزائی کرنا ہے۔
جائیداد کی قیمتوں پر اثرات کا انحصار تبدیلیوں پر مارکیٹ کے ردعمل پر ہوگا۔
سی جی ٹی اور ایڈوانس انکم ٹیکس کی شرحوں کی وجہ سے نان فائلرز کو ایک اہم مالی بوجھ کا سامنا کرنا پڑے گا۔
ریئل اسٹیٹ سیکٹر کو ہموار کرنے کے لیے حکومت کی کوششیں طویل مدت میں سرمایہ کاری اور مارکیٹ کی ترقی کا باعث بن سکتی ہیں۔

پاکستان ریئل اسٹیٹ ٹیکس 2024-25

نان فائلر اثر:

نان فائلرز کو ٹیکس کے اہم اثرات کا سامنا کرنا پڑے گا، کیونکہ ان پر انکم ٹیکس بریکٹ کے مطابق ٹیکس عائد کیا جائے گا۔ ان کے ٹیکس بریکٹ کے لحاظ سے ان کا CGT 15% سے 35% تک ہو سکتا ہے۔ یہ نان فائلرز کو جائیداد کے لین دین میں مشغول ہونے سے روک سکتا ہے، ممکنہ طور پر مارکیٹ کی سرگرمیوں کو متاثر کرتا ہے۔

ایڈوانس انکم ٹیکس:

ایڈوانس انکم ٹیکس میں تبدیلیاں فائلر کی حیثیت اور جائیداد کی قیمت کے لحاظ سے مختلف ہوتی ہیں۔ روپے سے کم جائیدادوں کے لیے 5 کروڑ، فائلرز 3% ایڈوانس ٹیکس ادا کرتے رہتے ہیں، جبکہ نان فائلرز اب 12% (11% سے زیادہ) ادا کرتے ہیں۔ روپے سے اوپر کی جائیدادوں کے لیے 10 کروڑ، فائلرز کو 4% (35% سے) تک کمی نظر آتی ہے، جبکہ نان فائلرز کو 20% (16% سے) تک اضافے کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

نتیجہ:

پاکستان کی رئیل اسٹیٹ ٹیکس پالیسیوں میں تبدیلیاں اہم ہیں اور ممکنہ طور پر مختصر اور طویل مدتی دونوں میں مارکیٹ پر اثر انداز ہوں گی۔ اگرچہ کچھ ابتدائی غیر یقینی صورتحال اور ایڈجسٹمنٹ کی توقع ہے، حکومت کا زیادہ شفاف اور ریگولیٹڈ مارکیٹ بنانے کا مقصد بالآخر رئیل اسٹیٹ سیکٹر اور پاکستانی معیشت کو فائدہ پہنچا سکتا ہے۔

Related posts

Latest File Rates & Market Overview July 23, 2024

Unveiling the Latest File Rates & Market Trends: July 23rd, 2024 Update Stay ahead of the...

Continue reading
by Faizan Ahmad

Latest File Rates & Market Overview July 22, 2024

Dominate the Property Market: A Comprehensive Look at Latest File Rates & Market Trends as of...

Continue reading
by Faizan Ahmad

Latest File Rates & Market Overview July 20, 2024

Unveiling the Real Estate Market: Latest File Rates & Insights for July 2024 As of today,...

Continue reading
by Faizan Ahmad

Join The Discussion

whatsappicon